ایسا گاؤں جہاں نام کی جگہ موسیقی استعمال ہوتی ہے

admin

ہم سب ایک دوسرے کو بلانے اور پہچاننے کے لیے ناموں سے پکارتے ہیں تاہم بھارت میں ایک ایسا سُریلا گاؤں ہے جہاں کے لوگ ایک دوسرے کو مخاطب کرنے کے لیے موسیقی کا استعمال کرتے ہیں۔

برطانوی میڈیا کے مطابق بھارت کی شمال مشرقی ریاست میگھالیہ کے ایک دور دراز گاؤں کونگ تھونگ میں جب کوئی بچہ پیدا ہوتا ہے تو اس کے دو نام رکھے جاتے ہیں ایک نام تو وہ ہوتا ہے جو سرکاری کاغذات اور گاؤں سے باہر پہچان کے لیے استعمال ہوتا ہے۔

جب کہ دوسرا نام  دُھن کی صورت میں ہوتا ہے اور یہ دُھن بچے کی والدہ اسی وقت خود ہی ترتیب دیتی ہے اور وہی اس کا نام ہوتا ہے جو کہ روزمرہ میں اسے مخاطب کرنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔

البتہ جب مقامی افراد  بات کرتے ہوئے کسی سے ناراض ہوتے ہیں تو اس کے اصلی یعنی سرکاری نام سے پکارتے ہیں ورنہ اسے دُھن والے نام ہی سے پکارا جاتا ہے۔

مقامی افراد کے مطابق یہ ان کی صدیوں پرانی روایت ہے اور ان کے بزرگ کھیتوں میں کام کرتے ہوئے ایک دوسرے کو اسی طرح پکارتے تھے۔

کونگ تھونگ گاؤں کے بزرگوں کو خدشہ ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ان کی صدیوں پرانی یہ روایت کہیں دم نہ توڑ جائے، خاص طور پر موبائل فونز کی رنگ ٹونز کی وجہ سے بھی مقامی افراد نالاں نظر آتے ہیں۔

مزید خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

پاکستان اور ایران خطے کے مسائل مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر متفق

FacebookTwitter وزیراعظم عمران خان اور ایرانی صدر حسن روحانی نے خطے کے مسائل مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر اتفاق کیا ہے. عمران خان اور حسن روحانی کے مابین ملاقات کے دوران باہمی دلچسپی کے امور اور خطے کے سکیورٹی معاملات پر تبادلہ خیال کیا گیا. وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، […]