اللہ کی جان اسی کی مرضی۔۔۔۔۔!!!

admin

امیر حمزہ عمر

بے پردہ نظر آئیں جو کل چند بیبیاں

اکبر زمیں میں غیرتِ قومی سے گڑ گیا

پوچھا جو میں نے آپ کا پردہ وہ کیا ہوا

کہنے لگیں کے عقل پہ مردوں کے پڑ گیا….

آج کل اِس موضوع پر بہت کچھ لکھا جا رہا ہے اس لیے میرا اس بارے میں لکھنا کوئی ضروری نہیں اور نہ ہی میں اس موضوع کو اتنا اہم سمجھتا ہوں مگر اس کے بارے میں اتنی بحث دیکھ اور سن کر محسوس کیا کہ میں بندہِ نا چیز بھی اپنی معمولی سی رائے کا اظہار کر دوں۔

میں اِس تحریک جس کو “عورت مارچ” کا نام دیا گیا ہے کو اس ملک میں چلتا دیکھ کر حیران ہوں جس ملک کی بنیاد ہی اُس مذہب پر رکھی گئی جس میں تمام اختیار اس قادرِ مُطلق کو حاصل ہے جس نے یہ کائنات تخلیق کی۔اور اُس قادرِ مطلق نے سب سے پہلے اشرف المخلوقات میں آدمی کی تخلیق کی۔

اور اس بات کا علم تو سب کے پاس ہی ہو گا کہ ہمارے پیارے نبی حضرت محمدِ مصطفٰیؐ کی آمد سے پہلے عرب میں عورتوں کے ساتھ کیا کیا جاتا تھا یہ باتیں تو قرآن پاک میں لکھی ہوئی ہیں جس کا مفہوم ہے۔۔۔۔

” اور جب ان کو معلوم ہوتا کہ ان کے ہاں بیٹی کی ولادت ہوئی ہے تو اُن کے چہرے سرخ ہو جاتے اور وہ غصے و جلال میں آ جاتے ہیں اور بالاآخر ان کو زندہ دفن کر دیتے ہیں”۔

اور پھر جب رحمتاللعلمین نبی کریمؐ تشریف لائے اور خالقِ کائنات کا پیغام لوگوں تک پہچایا اور عورتوں کے حقوق کو اسلام میں واضح کیا تب جا کے عورتوں کو معاشرے میں مقام ملا اور جہالت کا دور ختم ہوا۔

اسلام ہی وہ مذہب ہے کہ جس میں ماں کے پاؤں کے نیچے جنت، بہن پر خرچ کرنا سب سے بہترین صدقہ جبکہ بیوی سے مسکرا کر بات کرنا رب تعالٰی کو بہت عزیز ہے اور بیٹی کو رحمت قرار دیا گیاہے۔

اور نبی کریمؐ نے فرمایا کہ اگر میری ماں زندہ ہوتی اور میں عشاء کی نماز پڑھا رہا ہوتا اور میری ماں مجھے آواز دیتی اور میں نماز چھوڑ کر دوڑتا ہوا آتا کہ حکم کریں امی جان۔

اور جب آپؐ ہجرت کے لیے جا ہے تھے تو راستے میں جب اپنی ماں کی قبر دیکھی تو وہاں ہی بیٹھ گئے اور ساری رات قبر پر بیٹھ کر روتے رہے۔اور صحابہ اکرامؓ نے مرتبے کے بارے میں پوچھا تو تین بار ماں کا نام لیا اور چوتھی بار باپ کا نام لیا اور ہمیشہ بیویوں سے خوش اخلاقی سے پیش آتے اور صحابہ اکرام کو حکم دیتے کہ اپنی بیویوں پر رحم کیا کرو جس طرح میں تمہاری ماں عائشہؓ پر رحم کرتا ہوں۔ اور جب بھی خاتونِ جنت حضرت فاطمہؓ تشریف لے آتی تو اُن کے احترام میں کھڑے ہو جاتے اور ان کے سر پے ہاتھ مبارک رکھتے اور فرمایا کہ دوسروں کی نسل بیٹوں سے بڑھتی ہے مگر میری نسل میری بیٹی فاطمہؓ سے بڑھے گی۔

وہ حضرت فاطمہ الزہرہؓ جو کہا کرتی تھی کہ میرا جنازہ رات کی تاریخی میں نکالنا تاکہ میرے جنازے پر کسی نامحرم کی نظر نا پڑے۔

نبی کریمؐ نے دنیا سے پردہ فرمانے سے چند روز پہلے فرمایا “اور میرے بعد کہیں گمراہ نہ ہو جانا اور خاص طور پر عورتوں کے معاملے میں رب تعالٰی سے ڈرتے رہنا۔

اب ذرہ سوچیں جو مذہب عورتوں کا اس قدر احترام کرتا ہے اور عورتوں کے حقوق کا اس قدر خیال کرتا ہے تو اس مذہب کی خواتین اس قسم کی تحریک کی کس طرح متحمل ہو سکتی ہیں۔؟؟؟

پتہ نہیں کیوں ہم مغرب کی تہزیب سے اس قدر جڑنے کی کوشش کرتے ہیں اور وہاں کی تہذیب کو اپنے اوپر مسلط کرنے کی کوشش کرتےہیں۔؟؟

اس تحریک میں موجود بینرز اور کارڈز نہایت شرمناک ہیں اور اسلامی ملک میں اس طرح کے نعرے لگانا نہایت تشویش ناک ہے۔ہمیں سوچنا چاہیے کہ بحثیت قوم ہم کس طرف جا رہے ہیں۔

حضرت اماں خدیجہؓ نے فرمایا تھا کہ عورت کا بہترین زیوار پردہ ہے اور پردہ کرنے والی خواتین روزِ قیامت میری بیٹی فاطمہؓ کے ساتھ ہوں گی۔توجب اسلام کی بنیاد پر بننے والی ریاست میں کچھ اندرونی اور بیرونی طاقیں ایسی تحریک اُبھارنے کی کوشش کر رہی ہیں جس کا مقصد عورت کو مکمل طور پر آزاد کرنا یعنی جس طرح چاہیے کرے۔پردہ کرے یا نا کرے اُس کی مرضی،اپنا شوہر جس کے بارے میں ہے کے اگر خدا کے بعد کسی کو سجدہ کرنے کی اجازت ہوتی تو اپنے شوہر کو سجدہ کرنے کو کہا جاتا اس کا حکم مانے یا نہ مانے اس کی مرضی۔یہ نہایت تشویش ناک عمل ہے۔

میں کسی کے خلاف یا حق میں نہیں ہوں میں تو اس چیز کا حامی ہوں کے عورت پر کسی قسم کا ظلم نہیں کرنا چاہیے کیونکہ وہ عورت ہی ہے جو پورے خاندان کو سوارنے میں سب سے اہم کردار ادا کرتی ہے۔

مگر اس قسم کی مغربی نوعیت کی تحریک چلا کر اور اس میں گھٹیااور بےحودہ قسم کے نعروں کا استعمال کر کے آپ کس کو خوش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور کس چیز سے آزادی کی چاہت رکھتے ہیں۔

انسان کی کیا اوقات کہ وہ کہے کہ میری مرضی یہ بات تو ایک سمجھ رکھنے والےشخص کو سوٹ ہی نہیں کرتی کیونکہ ہم پر مکمل اختیار اُس مالک کریم کا ہے وہ جو چاہے وہ کرے۔اس مالک کریم کے علاوہ تو اس بات کا حق کوئی نہیں رکھتا کہ وہ کہے کہ جی میری مرضی۔اس لیے اس تحریک کی سرپرستی کرنے والوں کو بھی ہوش کے ناخن لینے چاہیے اور سوچنا چاہیے کہ اسلامی ملک میں اس قسم کی تحریک چلا کر وہ کیا ثابت کرنا چاہتے ہیں۔

کیونکہ رب تعالٰی نے تو اپنے پیغام میں فرمایا کہ۔۔۔

“اور اس کی نشانیوں سے ہے کہ اس نے تمہارے لیے تمہاری ہی جنس سے جوڑے بنائے تاکہ تم ان کی طرف آرام پاوُ اور تمہارے درمیان محبت و رحمت رکھی۔بے شک اس میں غوروفکر کرنے والوں کے لیے نشانیاں ہیں۔

یہ بات تو ظاہر سی ہے کہ چاہے مرد ہو یا عورت دونوں کے بغیر معاشرہ مکمل نہیں ہو سکتا اور دونوں میں سے کسی ایک کے بغیر بھی نظام آگے نہیں بڑھ سکتا۔تو کیوں ہم ایک دوسرے سے مقابلے کی دوڑ میں لگے ہوئے ہیں۔کیوں ہم ایک دوسرے سے پیارومحبت اور حسنِ سلوک سے نہیں رہتے۔اور آخر میں ہمیں اس قسم کی گھٹیا تحریکیں دیکھنی پڑتی ہیں۔

رب تعالٰی ہمیں اس قسم کے مغربی پروپگنڈوں سے پناہ عطا فرمائے اور میرا جسم میری مرضی کی بجائے اللّٰہ کی جان اُسی کی مرضی کہنے اور اسلام کو پڑھنے اور اس پر عمل کرنے کی توفیق دے۔

اور خاص طور پر آٹھ مارچ کو بجائے اس قسم کی گھٹیا تحریک کو اُجاگر کرنے کے رجب کے اس رحمتوں والے مہینے میں جس میں حضرت علی کرم اللہ وجہہ جیسی عظیم شخصیت کا ظہور ہوا جن کا چہرہ دیکھنا بھی عبادت قرار دیا گیا اور جن کے بارے میں آپؐ نے فرمایا علیؑ تیراجسم میرا جسم تیری جان میری جان (سبحان اللّہ) ان کی ولادت جو کہ تیرہ رجب کو ہوئی جو اس مارچ کی نو تاریخ بنتی ہے ان کے بارے میں پڑھیں اور ان کے واقعات پڑھ کر اپنے ایمان تازہ کریں۔

لہذا میں اپنے پیرومرشد اور حضرت علی المرتضٰی شیرِ خدا پیرِ کامل کے سچے مرید حضرتِ علامہ محمد اقبال کے اس پیغام و دعا پر اپنی بات مکمل کروں گاکہ۔۔۔۔

حیا نہیں ہے زمانے کی آنکھ میں باقی

خدا کرے تیری جوانی بے داغ رہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Next Post

آئی سی سی کا ٹی20ورلڈ کپ منسوخ نہ کرنے کا فیصلہ!!!ورلڈ کپ اکتوبر میں ہی ہو گا

ورلڈ کپ رواں سال اکتوبر میں ہی آسٹریلیا میں ہوگا: آئی سی سی نے اعلان کردیا آئی سی سی کا ٹی20ورلڈ کپ منسوخ نہ کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ آئی سی سی نے اعلان کیا ہے کہ ورلڈ کپ رواں سال اکتوبر ہی آسٹریلیا میں ہوگا۔ آئی سی سی نے بتایا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے کرکٹ […]

Subscribe US Now